Home / Featured / چاکلیٹ کھائیے دماغ کی بتی جلائیے!

چاکلیٹ کھائیے دماغ کی بتی جلائیے!

ہم اکثر بچوں بلکہ بڑوں کو بھی خبردار کرتے رہتے ہیں کہ چاکلیٹ مت کھائیں کھانسی ہو جائے گی دانت خراب ہو جائیں گے اور موٹے بھی ہو جائیں گے ، لیکن یہ کیا؟ جدید تحقیق تو کچھ ا ور ہی انکشافات کر رہی ہے! جی ہاں یہ خوش ذائقہ میٹھا حقیقت میں کیا کیا فوائد رکھتا ہے یہ تو اب پتا چلا ہے۔ چاکلیٹ دل کے افعال سرگرم رکھتا، بچوک کو منظم کرتا، حافظے کو بہتر بناتا، موڈ کو خوشگوار بناتا، کھانسی سردی کو بھگاتا، اعصابی نظام کو درست کرتا اور تنائو دور کر تا ہے۔

سوال یہ ہے کہ چاکلیٹ آخر ہے کیا؟

چاکلیٹ دراصل ایک میٹھا، پسے ہوئے یا بھنے ہوئے تھیو بروما کاکاٹو بتیوں کا بھورا آمیزہ ہے۔ یہ سیال، گودے اور ٹھوس بلاک کی شکل میں پائے جاتے ہیں۔ چاکلیٹ کے تین ضروری اجزاء کاکاٹو (سائنسی نام تھیو بروما کاکا ٹو ایل) ، دودھ اور چینی ہیں۔ یہ چھوٹے بڑے سب ہی شوق سے کھاتے ہیں اور یہ سلسلہ 3000 سال سے جاری ہے۔

چاکلیٹ میں بہت زیادہ حرارے ہوتے ہیں اور کچھ لحمیات کے ساتھ کاربوہائیڈریٹس، شکر، اور چکنائیوں پر مشتمل ہوتے ہیں۔ یہ وٹامن B12 ، نیاسین، ریبوفیوین، وٹامن ای اور معدنیات جیسے فاسفورس، میگنیز اور زنک کا بہترین ذریعہ ہیں۔ اس میں کلسٹیم، میگنیشیئم، پوٹاشیئم اور فولاد بھی شامل ہے۔ چاکلیٹ، خاص طور پر کاکاٹو دانوں سے تیار کردہ ڈارک چاکلیٹ کی قسم، طاقتور اینٹی آکسیڈنٹس جیسے فلیو ونائیڈز اور پولی فینولز کی وسیع ورائٹی سے بھرپور ہوتے ہیں۔

تاہم چاکلیٹس کے کچھ سائیڈ ایفیکٹس بھی ہیں۔ یہ موٹے افراد اور وہ لوگ جو کم جسمانی حرکت کرتے ہیں استعمال نہ کریں تو بہتر ہے لیکن یہ کھلاڑیوں اور محنت مشقت کرنے والوں کیلئے کافی مفید ہے۔ چونکہ اس میں کیفین کی مقدار بھی اس لیے اس کو کھانا والا بعض اوقات عادی ہو جاتا ہے اور نیند کی کمی اور بے چینی محسوس کرتا ہے۔

About ویب ڈیسک

Avatar

Check Also

کرکٹ ورلڈ کپ2019 پر ایک نظر

انگلینڈ نے ورلڈ کپ کے فائنل میں ایک دلچسپ مقابلے کے بعد اعصاب شکن میچ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے